اسلامک واقعات

کہ کاش یہ میرا جنازہ ہوتا

ہمارے اسلاف نے عبادت کو صرف اللہ کے لئے خاص رکھا اور قبروں کے پاس وہی کچھ کیا جسکی تعلیم اللہ کے رسولؐ نے دی کہ قبر والوں کے لئے استغفار کیاجائے اور انکے لئے اللہ سے رحمت کی دعا کی جائے کیوں کہ فوت شدگان کے اعمال سوائے (صدقہ جاریہ) کے منقطع ھو گئے ہیں اور اب وہ زندہ لوگوں کی دعا کے محتاج ہیں جو انکے لئے اللہ سے بخشش کی سفارش کریں۔

چنانچہ عوف بن مآلکؓ فرماتے ہیں آپؐ نے جنازہ پر جو دعا پڑہی وہ میں نے حفظ کر لی۔ اے میرے اللہ اسے بخش دے, اس پر رحمت فرما, اسے سلامتی میں رکھ اور اس سے درگزر فرما۔۔۔۔۔۔۔ مسلم کتاب الجنائز ابنِ ماجہ کتاب الجنائز صحابی رسول فرماتے ہیں کہ مجھے اس وقت خواہش پیدا ہوئی کہ کاش یہ میرا جنازہ ہوتا۔ میت پر جنازہ پڑھنے کا مقصد یہ ہے کہ اس کے لیے دعا و استغفار کی جائے اور اور اسکی بخشش کی سفارش۔ کیوں کہ قبر میں جانے کے بعد وہ دعاؤں کا زیادہ محتاج ہوتاہے۔ یہی اللہ کی نبی کی تعلیم ھے لیکن اس طریقہ رسول میں کوئی ایسی چیز ہے جو آج کے مشرکین نے اپنا رکھی ہے ؟
بات یہ ہے کہ انہوں نے مکمل طور پر اس کا الٹ کر رکھاہے ۔

loading...

فرمایا جب تم میت پر جنازہ پڑھو تو دل کی گہرائیوں سے دعا کرو۔ ابو داؤد کتاب الجنائز ج ۳ مسند احمد میں روایت ہے ابوھریرہؓ بیان کرتے ہیں ہم نے آپ ؐ کو جنازہ میں پڑھتے سنا۔اے اللہ تو اس کا رب ہے اور تو نے ہی اسے پیدا کیا اور تو نے ہی اسے اسلام کی طرف ہدایت دی اور تو نے اسکی روح قبض کی ہم سفارش کرتے ہیں کہ اسے معاف فرما دے۔ مسند احمد جلد ۲ ص ۲۰۶

ام المومنین عائشہؓ اور انسؓ سے مروی ہے کہ آپؐ نے فرمایا جب کسی میت پر سو مسلمان جنازہ پڑھیں اور اسکے حق میں سفارش کریں تو انکی سفارش قبول ہوتی ہے۔لیکن آج کے نام نہاد عاشق نبیؐ کے طریقہ کے الٹ ان کے وسیلے سے اپنے لیے دعائیں اور سفارشیں کروانے لگ گئے ہیں۔اہلِ شرک و بدعت نے اللہ کے رسولؐ کے حکم کو یکسر پس ِ پشت ڈال کر میت سے اپنے لیے دعا مانگنی شروع کر دی ہے۔زیارت قبور کے اس مقصد کو جو رسول اللہ نے میت کے حق میں نیکی اور آخرت کی یاد دہانی کے لئے مشروع فرمایا , اسے میت سے حاجت روائی اور مشکل کشائی میں بدل ڈالآ ھے اور اللہ کو اس کے نام کی قسم دینا شروع کر دی ہے۔

اسکی قبر کو عبادت گاہ بنا لیاہے اور اسکے سامنے اپنے لیے دعا کے وقت ایسے خشوع و خضوع اور حضورِ قلب کا مظاہرہ کرتے ہیں کہ جو انہیں مسجدوں میں اللہ کے سامنے بھی نصیب نہیں ھوا

loading...

Leave a Comment