اسلامک معلومات

ہجرت مدینہ کے بعد مہاجرین اور انصار کے درمیان مواخات کا رشتہ

 

ہجرت مدینہ کے بعد مہاجرین اور انصار کے درمیان مواخات کا رشتہ

ہجرت مدینہ کے بعد مہاجرین اور انصار کے درمیان مواخات کا رشتہ

مواخات عربی زبان کا لفظ ہے .جس کا مطلب بھائی چارہ ہے .کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہجرت مدینہ کے بعد مہاجرین اور انصار کے درمیان مواخات کا رشتہ قائم کیا. آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے مہاجرین و انصار کو آپس میں بھائی بھائی بنا دیا تاریخ میں یہ رشتہ اخوت مواخات مدینہ کے نام سے .مشہور ہے

مہاجرین کی بھرپور مدد

مہاجرین سے مکہ مکرمہ کے مسلمان ہیں .جنہوں نے کفار مکہ کے ظلم سے تنگ آ کر مکہ مکرمہ سے مدینہ منورہ کی طرف اللہ تعالی کی رضا کی خاطر ہجرت کی. یہ لوگ اللہ تعالی کے حکم سے ہجرت کرکے بھروسا معنی کی حالت میں مدینہ منورہ پہنچے .ان میں کچھ صحابہ کرام الزامات بھی تھے. ان کے .مکہ مکرمہ گھر یہ لوگ جب ہجرت کرکے مدینہ منورہ آئے تو خالی ہاتھ تھے مدینہ منورہ کے مسلمانوں نے مہاجرین کی بھرپور مدد کی
اللہ تعالی نے ان لوگوں کو انصار کا خطاب عطا فرمایا.

اہل مدینہ

مہاجرین مکہ مکرمہ میں اپنا سب کچھ چھوڑ کر مدینہ منورہ خالی ہاتھ پہنچے تھے. نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو احساس تھا .کہ مہاجرین اہل مدینہ کے لیے بوج اور پریشانی کا باعث نہ بنے. مہاجرین کے درمیان مواخات قائم کرنے کے لئے انہیں حضرت انس بن مالک رضی اللہ تعالی عنہا کے مکان پر جمع کیا. مواخات مدینہ کی بدولت مہاجرین کی پریشانیوں کا خاتمہ ہوگیا .انہیں امن و سکون حاصل ہوا. وہ مکہ مکرمہ چھوڑنے کا صدمہ بھول گئے انہیں امن و سکون حاصل ہوا.

چھوڑنے کا صدمہ

وہ مکہ مکرمہ چھوڑنے کا صدمہ بھول گئے
مہارت کی وجہ سے مدینہ منورہ میں اسلامی معاشرہ قائم ہوئے مہاجرین و انصار نے اشاعت اسلام کے لئے مل کر کام کیا اور لوگوں تک اللہ تعالی کا پیغام پہنچایا یہی وجہ ہے کہ چند سال کے عرصے میں اسلام دور دور تک پھیل گیا. ہمیں بھی چاہیے کہ انصار مدینہ کی طرح ایثار کا عملی مظاہرہ کریں . دوسرے مسلمانوں کی ضروریات کو اپنی ضروریات پر ترجیح دیں. اس سے معاشرے میں امن و استحکام قائم ہوگا .ان سارے اولیاء اللہ کے سارے قربانی کی پیروی .کرنے سے دنیا میں عزت حاصل ہو گی . آخرت میں ہمیشہ کی کامیابی ملے گی

Leave a Comment