اسلامک واقعات

کیوں لوگ شراب میں ڈوبتے ہیں؟

کیوں لوگ شراب میں ڈوبتے ہیں؟؟ اندر کی ویرانی ان کو نشوں میں لے جاتی ہے۔ وہ ان ویرانیوں کو شراب سے دور کرتے ہیں۔ ارے! اللہ کو ڈھونڈو، ایک ذہنیت ہے کہ جتنا اپنی مرضی سے چلو گے اتنا سکون ملے گا، نہیں! جتنا اپنی مرضی سےچلو گے تباہ ہوتے جاو گے۔اللہ کہتا ہے علی! جب سائرن بجتا ہے تو کان کھڑےہوجاتے ہیں کہ کیا ہوا ہے ؟

کیوں سائرن بج رہا ہے۔ اسی طرح علی عربی میں سائرن ہے جس کا مطلب یہ ہےکہ” سنو ، سنو ” اے نوجوانوں سنو! اللہ کو یاد کرو گے تو دلوں میں سکون آئے گاورنہ ایسے ہی تڑپتے رہو گے ، بے سکون رہو گے۔اللہ ملا تو سب کچھ ملا، نا ملا تو کچھ نہیں ملا۔ زندگی کے بننے اور بگڑنے کا تعلق باہر سے نہیں اندر سے ہے۔دل میں اللہ کو بسائو۔ پھر سولیوں پر چڑھ کر بھی مسکراو گے، پیٹ پر پتھر باندھ کر بھی ہنسو گے۔ یہی تو حسین نے کربلا میں کر کے دکھایا۔ کہ ایک طرف اللہ مل رہا تھا تو سر کٹانے کو تیار ، بچے ذبح ہونے کو تیار، خاندان اجڑ جانے کا بھی دکھ برداشت، محض اس لیے کہ اللہ مل رہا ہے۔ جب اسماعیل علیہ السلام سے ابراہیم علیہ السلام نےکہا کہ بیٹا تمہارے ذبح ہونے کا حکم ہو چکا ہے کیا کہتے ہو تم ؟

انہوں نے کہا بابا جلدی کریں ابراہیم علیہ السلام نے دوبارہ پوچھا کی بیٹا تمہیں پتہ ہے کہ میں کیا کہہ رہا ہوں؟ کہا بہت اچھا سودا ہے بابا زندگی کے بدلے میں اللہ مل رہا ہے اور دنیا کے بدلے میں جنت مل جائے گی جو دنیا سے بہتر ہے۔ ہم سب دنیا کے پیچھے بھاگنے میں مصروف ہیں اور دلوں کا سکون گنوا بیٹھے ہیں۔ دل کے سکوں اور اللہ کو پانے کے لئے اللہ کی طرف لوٹ آو ۔ توبہ کر لو۔ جب بندہ گناہوں پر ندامت کا اظہار کرتا ہے تو اللہ خوش ہوتا ہے۔ جب اللہ کسی سے ناراض ہوتا ہے تو اپنی راہنمائی روک لیتا ہے دل کا سکون چھین لیتا ہے سجدوں کی دولت چھین لیتا ہے اپنا جوف اس کے دل سے نکال دیتا ہے اس لیے سکون چاہیے تو پہلے اللہ کو راضی کرو اللہ کو ڈھونڈ و ، اسے پا لو سب کچھ مل جائےگا۔

Leave a Comment