اسلامک معلومات اسلامک واقعات اسلامک وظائف

پیارے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے رو رو کر دعا مانگی

دعا کہ ایسی چیز ہے جس سے ہم اللہ سے اپنی تقدیر تک بدلوا سکتے ہیں-دنیا میں جس میں سب سے زیادہ طاقت ہوتی ہے وہ دعا ہے-دعا کے ذریعے ہر چیز بدلی جا سکتی ہے-ہمارے تمام انبیاء کرام دعا مانگا کرتے تھے-ہمارے پیارے رسول صلی اللہ علیہ وسلم بھی دعا مانگا کرتے تھے-انہوں نے تو اپنی امت کے لیے رو رو کر دعا مانگی تھی-کبھی کبھی ایسا بھی ہوتا ہے کہ ہمیں لگتا ہے ہماری دعائیں قبول نہیں ہو رہیں شاید اللہ ہم سے ناراض ہے-ہاں یہ وجہ بھی ہوسکتی ہے لیکن اگر آپ مثبت انداز میں سوچیں تو ہوسکتا ہے جو دعا آپ مانگ رہے ہیں وہ آپ کے حق میں بہتر ہی نا ہو یا جس وقت میں آپ وہ دعا مانگ رہے ہیں وہ وقت سہی نا ہو اور سہی وقت آنے پر وہ دعا قبول ہو-دعائیں ضرور قبول ہوتیں ہیں فورا نہیں تو عرصے بعد جا کر لیکن ضرور ہوتیں ہیں-دعا کرتے وقت یہ کامل یقین ہونا لازم ہے کہ دعا قبول ہوگی-جو آپ مانگ رہے ہیں وہ صرف اللہ کی ذات ہی دے سکتی ہے اور کوئی نہیں-رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان ہے:

“اللہ کے نزدیک دعا سے زیادہ کوئی چیز معزز نہیں”

اللہ تعالی تو ہمیں خود کہتے ہیں میں مجھ سے دعا کرو-لیکن دعا مانگنے کی شرط یہ ہے کہ آپ کا دل صاف ہو اور آپ مخلص ہوں-سچے دل سے مانگی گئی دعا کبھی رد نہیں ہوتی-ہمیں دعا مانگتے وقت بے صبری نہیں دکھانی جو کہ اکثر لوگ کرتے ہیں-دعا مانگ لی ہے بس اب یہ یقین کر لیں کہ دعا قبول ہوگی کب ہوگی یہ اللہ پر چھوڑ دیں-ہم اکثر کہتے ہیں کہ میں نے دعا کی تھی لیکن قبول نہیں ہوئی ایسا اسی لیے ہوتا ہے کیونکہ اس بات کا یقین کر لیتے ہیں کہ دعا قبول ہونی ہی نہیں اسی لیے پھر اللہ بھی دعا قبول نہیں کرتے-دعا کے قبول ہونے انتظار کریں بے یقنی یا بے صبری نا دکھائیں-

Leave a Comment