اسلامک معلومات

مالک کائنات سے خصوصی ملاقات کا وقت

ایک دور تھا جب گھر کے بڑے چھوٹے رات کو جلدی سوتے کر صبح سویرے اٹھتے تھے،اکثر گھر کے بڑے بزرگ مرد و خواتین تہجد پڑھا کرتے تھے،گھروں میں سکون کی فضائیں ہوتی تھیں اور بڑوں کی دعائیں تقدیریں بدلتی تھیں۔اب وقت بدلنے سے لوگوں کے معمولات یکسر تبدیل ہو گئے،رات کو دیر تک جاگنا اور جاگنے کے وقت سونا ایک فیشن بن گیا،تبھی زندگی میں نہ چین رہا نہ سکون۔
رات کی آخری پہر میں اٹھ کر اپنے رب سے باتیں کرنا،اپنی حاجات سنانا اور گڑگڑا کر مانگنے میں جو لذت ہے بزرگ فرماتے ہیں وہ دنیا کی بادشاہی میں بھی نہیں۔پریشانیاں کتنی بڑھ چکی ہیں لیکن ان لمبی راتوں میں بھی بہت کم لوگ رات کی آخری پہر خاموشی میں بہت کم لوگ اٹھتے ہیں۔پھر شکایت کیسی؟اگر آپ رات کسی ڈیوٹی پر ہے،یا نصف شب کے بعد سوتے ہیں تو وضو کر کے چار رکعات سکون سے پڑھیئے،یقین کیجئے زندگی میں انقلاب آجائے گا،دلی اطمینان اور ذہنی سکون میسر ہوگا۔
اگر آپ گناہوں سے تنگ آچکے ہیں اور کوئی وظیفہ کارگر نہیں تو تہجد پڑھییے،گویا آپ نے بنیاد ہی بدل ڈالی۔

Leave a Comment