قصص الانبیا ء

صحبت کیسی اختیار کی جائے؟ احادیث مبارکہ سے راہنمائی…

صحبت کیسی اختیار کی جائے؟ احادیث مبارکہ سے راہنمائی.

رسول اللہ ﷺ سے سوال کیا گیا کہ ہم جن کے ساتھ اٹھتے بیٹھتے ہیں .ان میں سب سے اچھا شخص کون ہے؟ فرمایا۔
: جس کے دیدار سے تمہیں اللہ یاد آئے، جس کی گفتگو تمہارے علم میں اضافہ کرے. اور جس کا عمل تمہیں آخرت یاد دلائے(مجمع الزوائد)

نوادر الاصول

حکیم ترمذی رحمہ الله تعالیٰ”نوادر الاصول“ میں آپ ﷺ کے فرمان
”من ذکَّرکم بالله رؤیتُہ“ (جس کا دیدار تمہارے اندر الله تعالیٰ کی یاد تازہ کر دے) کی شرح کرتے ہوئے فرماتے ہیں : ”یہ وہ لوگ ہیں جن پر خدا تعالیٰ کی نشانیاں ظاہر وباہر ہیں ۔ ان سے قرب خداوندی کی رونق، عظمت ایزدی کانور، کبریائی کا رعب ودبدبہ، وقار وسکینت کی انسیت ٹپکتی ہے، ان پر ملکوتیت کے آثار کے ظہور کی وجہ سے ان کو دیکھ کر الله تعالیٰ کی یاد ستاتی ہے۔

مشہور ہے
أحب الصالحین ولست منھم
لعل الله یرزقنی صلاحاً

صحبت کیسی اختیار کی جائے:

بڑوں کے پاس بیٹھا کرو

مسلمانو! اپنے سے بڑوں کے پاس بیٹھا کرو، عالموں سے سوال کیا کرو اور دانشمندوں سے ملا کرو(طبرانی)

ذکر کی مجلسوں میں بیٹھا کرو

اہل ذکر کی مجلسوں میں بیٹھا کرو(یعنی ان لوگوں کے پاس جو اللہ کا ذکر کرتے ہیں) (مشکوٰۃ)

پرہیزگار

سوائے مومن آدمی کے کسی کی صحبت مت اختیار کرو اور تمہارا کھانا سوائے پرہیزگار کے کوئی نہ کھائے(ترمذی)

صحبت

آنحضرت ﷺ نے فرمایا: جب تم دیکھو کہ کسی آدمی کو کہ دنیا میں اس کو رغبت نہیں ہے.اور وہ شخص کم گو بھی ہے تو اس کی صحبت میں رہو حکمت اس کے دل پر ڈالی جائے گی(سنن ابن ماجہ)

اعمال کی استطاعت

نبی کریم ﷺ سے اس بارے میں سوال کیا گیا کہ آدمی کسی سے محبت رکھتا ہے. لیکن اس جیسے اعمال کی استطاعت نہیں رکھتا تو آپ نے فرمایا آدمی اسی کے ساتھ ہوگا جس سے وہ محبت رکھتا ہے(ابوداؤد)

دوست کے دین

نبی کریم  ﷺ کا ارشاد ہے: آدمی اپنے دوست کے دین پر ہوتا ہے. اس لیے ہر آدمی کو غور کر لینا چاہیے کہ وہ کس سے دوستی کر رہا ہے (ابوداؤد، ترمذی)

 اچھے ہم نشیں اور برے ہم نشیں کی مثال

اچھے ہم نشیں اور برے ہم نشیں کی مثال بعینہ ایسی ہی ہے. جیسے کہ عطر فروش اور بھٹی پھونکنے والا۔ عطر فروش یا تو تمھیں عطر تحفے میں دے دے گا یا پھر تم اس سے خرید لو گے.( کم از کم )تمھیں ا س سے خوش بو تو آئے گی ہی۔ جب کہ بھٹی میں پھونکنے والا یا تو تمھارے کپڑے جلا ڈالے گا یا پھر تمھیں اس سے بد بو آئے گی(متفق علیہ)

لوگوں سے ملنے جلنے میں طرز عمل کیسا ہو؟ :

رسول اللہ ﷺ نے فرمایا کہ اپنے دوست کا اعزاز و اکرام اس طور پر نہ کرو جو، اسے شاق گزرے(یعنی ہر شخص کے ساتھ اس کے مرتبہ کے شایان شان برتاؤ کرو(الادب المفرد)

نیکی کو حقیر مت سمجھو

تم کسی بھی نیکی کو حقیر مت سمجھو چاہے تم اپنے بھائی سے خندہ پیشانی کے ساتھ ہی کیوں نہ ملو(مسلم)

.اپنے بھائی کو دیکھ کر تمہارا مسکرا دینا بھی صدقہ ہے(ترمذی)

نرم طبیعت

.میں تمہیں اس آدمی کی پہچان بتاتا ہوں جس پر جہنم کی آگ حرام ہے۔ اور وہ آگ پر حرام ہیں، یہ وہ آدمی ہے جو نرم مزاج ہو، نرم طبیعت ہو او رنرم خو ہو (ترمذی)

اپنے بھائی(مسلمان) سے (خوامخواہ) بحث نہ کیا کرو اور نہ اس سے (ایسی) دل لگی کرو(جو اس کو ناگوار ہو) اور نہ اس سے کوئی ایسا وعدہ کرو جس کو تم پورا نہ کرو(ترمذی)

جذبات سے آگاہ

جب کسی کے دل میں اپنے بھائی(مسلمان) کے لیے خلوص و محبت کے جذبات ہوں تو اسے چاہیے کہ اپنے دوست کو بھی ان جذبات سے آگاہ کر دےاور اسے جتا دے کہ وہ اس سے محبت رکھتا ہے(الادب المفرد-مشکوٰۃ)

Leave a Comment