اسلامک معلومات

سوچئے ہمیں کیا چیز اللہ سے زیادہ پیاری ہو جاتی ہے؟

سوچئے ہمیں کیا چیز اللہ سے زیادہ پیاری ہو جاتی ہے؟

1.ہماری اَنا

جو اللہ کی خاطر جھک جائے، اللہ اسکو بلند کرتا ہے۔
اپنی ناک کی خاطر اڑے رہیں گے، اکڑے رہیں گے تو گھروں کے یہی برے حالات رہے ہیں، رشتے داریاں ڈسٹرب رہیں گی۔ اللہ کی خاطر، انا کو ذبح کر دیں۔ اپنی عزت قربان کرکے جھگڑا ختم کر دیجئے۔

2.ہماری خواہشات اللہ کا حکم ٹوٹ جائے مگر خواہشات نہ ٹوٹیں۔ اپنی دل پسند چیز تو پوری ہو جائے. اللہ تعالی کے حکم اور حدود چاہے خراب کریں۔
اپنی دل کی، نفس کی خواہشات کو اللہ کی خاطر ذبح کر دیجئے۔ اللہ کے حکم کو سب سے آگے کر دیجئے۔

3.ہمارے بچے اور ان کے جذبات
ان عظیم باپ بیٹوں(حضرت ابراہیم اور حضرت اسمائیل علیہ اسلام) دونوں کے جذبات کا سخت امتحان تھا۔ ہماری اولاد بھی ہمارے لئے آزمائش ہے، اتنی سخت نہیں کہ اپنے دل کے ٹکڑے کو ذبح کرنا پڑے۔
سوچئے ہمیں کیا بچوں کی خواہشات اللہ کے حکم کے خلاف ہوں ہم تب بھی کیوں مان لیتے ہیں۔ ان کے جذبات زخمی نہ ہوں لیکن اللہ کے حکم ہو اہمیت نہیں دی جاتی۔
جیسے وہ چاہتے ہم وہی فضول رسمیں کر کے ان کی شادیاں کرتے ہیں۔
ان کی ایسی فرمائش جو آخرت کیلئے نقصان دہ ہے وہ بھی پوری کر دیتے ہیں، کہیں ہمارے بچے نہ ترسیں، کہیں ان کا دل نہ ٹوٹے۔

ان سب باتوں کے مطابق ہم آج اپنا جائزہ لیں۔ کیا ہماری اللہ کی محبت خالص ہے، یا اس میں اولاد اور ہماری خواہشات کی ملاوٹیں شامل ہے۔
یاد رکھئے۔
وہی ہے جو ہستی خالص محبت کے لائق ہے۔
اسکی محبت اور خوف کو ہر محبت اور ہر دوسرے اندیشے سے آگے کر دیں

Leave a Comment