اسلامک معلومات

حضورﷺ کے کھانے پینے کی عادات

حضورﷺ کے کھانے

حضورﷺ کے کھانے پینے کی عادات

حضورﷺ کے کھانے: آپ صلی اللہ علیہ وسلم ٹیک لگا کر کھانا نہ کھاتے تھے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے تھے ۔ میں بندہ ہوں اور بندوں کی مانند بیٹھتا ہوں۔ اور ایسے ہی کھاتا ہوں جیسے بندے کھاتے ہیں۔ ( حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی نشست اس قسم کی تھی کہ گویا گھٹنوں کے بل بھی کھڑے ہو جائے) یعنی اکڑوں بیٹھ کر۔ (زاد المعاد)

ٹیک لگانے سے مراد جم کر بیٹھنا۔  اور کھانے کے وقت چوکڑی مار کر سریں پر بیٹھنا۔ اس بیٹھنے کے مانند ہے جو کسی چیز کو اپنے نیچے رکھ کر ٹیک لگا کر بیٹھے۔ صاحب مواہب کہتے ہیں کہ کھانے کے لیے اس طرح بیٹھنا مستحب ہے۔  کہ دونوں رانوں کو کھڑا کرے اور بائیں پاؤں پر بیٹھے۔ ابنِ قیم نے بیان کیا ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم تواضع و ادب کی خاطر بائیں قدم کے اندر کی جانب کو داہنے قدم کی پشت پر رکھتے تھے ۔ (مدارج النبوہ)۔

حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی تواضع میں سے ایک یہ بھی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کھانے میں کبھی عیب نہ بتاتے تھے۔ اگر چاہا تو کھا لیا ورنہ چھوڑ دیا اور یہ کبھی نہ فرمایا کھانا برا ہے، ترش ہے ، نمک زیادہ ہے یا کم ہے، شوربہ گاڑھا ہے یا پتلا ہے وغیرہ (مدارج النبوہ)۔ اس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ کھانے میں عیب نکالنا غلطی اور خلاف اتباع سنت ہے۔

بسم اللہ سے ابتداء

حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کھانے کی ابتداء میں بسم اللہ پڑھتے۔ اور آخر میں حمد کرتے “الحمد اللہ حمدا کثیرا طیبا مبار کافیہ”۔ (زاد المعاد) آپ صلی اللہ علیہ وسلم کھانے سے پہلے ہاتھ دھوتے۔  اور سیدھے ہاتھ سے اپنے سامنے سے کھانا شروع کرتے۔ (زاد المعاد) کھانا اگر برتن کی چوٹی تک ہوتا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم چوٹی سے کھانا شروع نہ فرماتے بلکہ اپنے سامنے نیچے کی جانب سے شروع کرتے اور فرماتے کہ کھانے میں برکت چوٹی ہی میں ہوتی ہے۔ ( خصائل نبوی ۔ نشر الطیب ۔ ترمذی ۔ ابنِ ماجہ ۔ مشکوٰۃ)۔

آپ صلی اللہ علیہ وسلم جب کسی کھانے میں ہاتھ ڈالتے تو انگلیوں کی جڑوں تک کھانے میں نہ بھرتے۔ (نشر الطیب) حدیث میں ہے کہ کعب بن مالک رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی عادت شریف تین انگلیوں سے کھانا تناول فرمانے کی تھی اور ان کو چاٹ بھی لیا کرتے تھے۔ (شمائل ترمذی ۔ مسلم) آپ صلی اللہ علیہ وسلم کھانے کی چیز پر پھونک نہ مارتے اور اس کو برا جانتے اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم کھانے کو کبھی نہ سونگھتے اور اس کو برا جانتے۔

Leave a Comment