قصص الانبیا ء

حضرت یحییٰ ؑاونٹ کے چمڑے کا لباس پہنتے اور جنگلی خوراک کھاتے تھے

hazrat yahya

حضرت یحییٰ ؑ راہ کا تیار کرنے والا
سورة الاٴنعَام (سورة 6 – گائے) میں بتایا گیا ہے کہ ہمیں توبہ کرنی ہے۔
جیسا کہ بیان کیا گیا ہے۔

اور جب تمہارے پاس ایسے لوگ آیا کریں جو ہماری آیتوں پر ایمان لاتے ہیں تو (ان سے) سلام علیکم کہا کرو خدا نے اپنی ذات (پاک) پر رحمت کو لازم کرلیا ہے کہ جو کوئی تم میں نادانی سے کوئی بری حرکت کر بیٹھے پھر اس کے بعد توبہ کرلے اور نیکوکار ہوجائے تو وہ بخشنے والا مہربان ہے سورة الاٴنعَام 6: 54

توبہ کیا ہے؟ اس کے بارے میں سورة ھود (سورة 11) چند آیات بیان کی گئی ہیں۔

اور اے قوم! اپنے پروردگار سے بخشش مانگو پھر اس کے آگے توبہ کرو۔ وہ تم پر آسمان سے موسلادھار مینہ برسائے گا اور تمہاری طاقت پر طاقت بڑھائے گا اور (دیکھو) گنہگار بن کر روگردانی نہ کرو
سورة ھود 11: 52

اور ثمود کی طرف ان کے بھائی صالح کو (بھیجا) تو انہوں نے کہا کہ قوم! خدا ہی کی عبادت کرو اس کے سوا تمہارا کوئی معبود نہیں۔ اسی نے تم کو زمین سے پیدا کیا اور اس میں آباد کیا تو اس سے مغفرت مانگو اور اس کے آگے توبہ کرو۔ بےشک میرا پروردگار نزدیک (بھی ہے اور دعا کا) قبول کرنے والا (بھی) ہے
سورة ھود 11: 61

اور اپنے پروردگار سے بخشش مانگو اور اس کے آگے توبہ کرو۔ بےشک میرا پروردگار رحم والا (اور) محبت والا ہے
سورة ھود 11: 90

توبہ کا جب اعتراف کیا جاتا ہے تو اس کا مطلب ہے کہ آپ اللہ کی طرف رجوع کرتے ہیں۔
حضرت یحییٰ نے انجیل پاک میں توبہ کے بارے میں بہت کچھ کہا ہے۔ جسے ہم یہاں دیکھتے ہیں۔

ہم نے اپنی پچھلے مضمون میں اس بات پر غور کیا تھا۔ کہ زبور شریف کو حضرت ملاکیؑ نبی نے تکمیل کیا اور اُنہوں نے اپنی اس کتاب میں فرمایا تھا۔ کہ ایک شحص آئے گا جو راہ کو تیار کرے گا (ملاکی 3: 1)۔ ہم نے اس بات کو بھی دیکھا ہے کہ جب ہم انجیل شریف کو کھولتے ہیں۔ تو جبرایل فرشتہ حضرت یحییٰ ؑ اور حضرت عیسیٰ المسیح کی پیدائش کی بشارت دیتا ہوا نظر آتا ہے۔

حضرت یحییٰ ؑ حضرت الیاس ؑ کی روح اور طاقت میں
حضرت یحییٰ ؑ کی پیدائش کے بعد انجیلِ مقدس میں اس طرح لکھا ہے۔ (اُس کو حضرت یوحنا بپتسمہ دینے والے کے طور پر بتایا گیا

‘اور وہ لڑکا بڑھتا اور رُوح میں قُوّت پاتا گیا اور اِسرا ئیل پر ظاہِر ہونے کے دِن تک جنگلوں میں رہا

لُوقا 1:80

جب وہ بیابان میں رہ رہا تھا تو انجیل مقدس میں اس طرح لکھا ہے۔

‘یہ یُوحنّا اُونٹ کے بالوں کی پوشاک پہنے اور چمڑے کا پٹکااپنی کمر سے باندھے رہتا تھا اور اِس کی خوراک ٹِڈّیاں اورجنگلی شہد تھا۔ ‘ متّی 3:4

حضرت یحییٰ ؑ روح سے بھرا ہوا اور اونٹ کے چمڑے کا لباس پہنتا اور جنگلی خوراک کھاتا تھا۔ وہ بیابان میں رہتا تھا۔ لیکن یہ سب اُس کی روح کی وجہ سے نہیں تھا۔ یہ ایک خاص نشان بھی تھا۔ ہم نے زبور شریف کی اختتامی کتاب میں پڑھا ہے۔ کہ راہ کی تیار کرنے والا “حضرت الیاسؑ” کی روح” میں آئے گا ۔ حضرت الیاس ؑ زبور شریف کے ایک نبی ہوئے تھے۔ جو حضرت یحییٰ ؑ سے پہلے نازل ہوئے اور بیابان میں رہتے اور جنگلی خوراک اور حضرت یحییٰ ؑ ی طرح کا لباس پہنتے تھے۔

اُنہوں نے اُسے جواب دیا کہ وہ بہت بالوں والا آدمی تھا اور چمڑے کا کمر بند اپنی کمر پر کسے ہوئے تھا۔ تب اُس نے کہا کہ یہ تو ایلیاہ (الیاس) تشبی ہے۔ 2سلاطین 8: 1

لہذا جب حضرت یحییٰ ؑ چمڑے کا لباس پہنے اور بیابان میں رہ رہا تھا۔ تو اس کا مطلب تھا کہ وہ یہ ہی ہے جس کی پیش گوئی ہوئی تھی۔ کہ وہ حضرت الیاس ؑ (حضرت ایلیاہ) کی روح میں آئے گا۔ اُس کا بیابان میں رہنااور جنگلی خوراک کھانا اس بات کا اعلان تھا۔ کہ جس طرح اللہ تعالیٰ نے اپنی کتاب میں فرمایا تھا۔ وہ پورا ہورہا ہے۔

انجیل مقدس کی تاریخی تصدیق
پھر انجیل مقدس میں بتاتا گیا ہے کہ:

‘تِبرِ یُس قَیصر کی حُکومت کے پندرھویں برس جب پُنطِیُس پِیلا طُس یہُودیہ کا حاکِم تھا اور ہیرود یس گلِیل کا اور اُس کا بھائی فِلپُّس اِتُور یہِّ اور ترخونی تِس کا اور لِسانیا س اَبِلینے کا حاکِم تھا اور حنّاہ اور کائِفا سردار کاہِن تھے اُس وقت خُدا کا کلام بیابان میں زکریا ہ کے بیٹے یُوحنّا (یحییٰؑ) پر نازِل ہُؤا اور وہ یَرد ن کے سارے گِرد و نواح میں جا کر گُناہوں کی مُعافی کے لِئے تَوبہ کے بپتِسمہ کی مُنادی کرنے لگا۔ لوقا 3: 1-3

یہ حوالہ حضرت یحییٰ ؑ کی خدمت کے تعلق سے بڑی اہمیت کا حامل ہے۔ کیونکہ اُن کی خدمت کے آغاز میں ہی سے بہت سے معروف حکمرانوں کا ذکرکیا گیا۔ جس سے ان کی خدمت اور منفرد ہو جاتی ہے۔ توجہ طلب بات یہ ہے۔ کہ ان تاریخی واقعات کا ذکر کرنے کی وجہ سے۔ انجیل مقدس کو تاریخی اور آثارِقدمہ کے حساب سے تصدیق ملتی ہے۔

Leave a Comment