قصص الانبیا ء

حضرت موسیٰ اور حضرت ہارون نے 40 سال تک بنی اسرائیل کی پیشوائی کی

تورات شریف میں “نبی” کی نشانی حضرت موسیٰ اور حضرت ہارون نے 40 سال تک بنی اسرائیل کی پیشوائی کی۔ اُنہوں نے دس احکام اور قربانیوں کی تعلیم تحریری صورت میں اُن کو دی۔ اُنہوں نے تورات شریف میں بہت ساری نشانیوں کے بارے میں بھی لکھا۔ اس سے پہلے ہم تورات شریف کے مطالعہ کو ختم کریں۔ آئیں ہم اس میں پائے جانے والے نمونوں کا جائزہ لیں۔

تورات شریف کے نمونوں کا جائزہ چنائچہ تورات شریف میں سے ابھر کر سامنے آنے والی نشانیوں کا نمونہ درج ذیل ہے؟ تورات شریف میں قربانیاں کا نمونہ ہمیں اس بات کی اہمیت پر غور کرنا چاہیے کہ کس طرح تورات شریف میں بار بار قربانیوں کا سلسلہ جاری رہا۔ مندرجہ ذیل قربانیوں پر غور کریں۔ ہابیل نے سچائی کے ساتھ قربانی پیش کی اور قابیل نے سبزیوں کی قربانی حسد کے ساتھ پیش کی۔ اسکی قربانی قبول نہ کی گئی۔ حضرت نوح نے سیلاب کے بعد قربانی پیش کی۔حضرت ابراہیم نے قربانی پیش کی جب وہ ملکِ موعود میں پہنچا حضرت ابراہیم نے اپنے بیٹے کی قربانی کے امتحان کے بعد ایک مینڈھا قربان کیا۔ پھر اس کے فوراً بعد اعلان کیا۔ کہ اسی جگہ پر “مہیا کیا جائے گا” تمام اسرائیلیوں نے فسح پر قربانی کی اور اس قربانی کے باعث ان کو موت سے رہائی ملی۔ یہودی آج بھی ہر سال اس دن کو عیدِ فسح کے نام سے مناتے ہیں۔ حضرت ہارون ہر سال 2 بکریوں کی قربانی قوم بنی اسرائیل کے لیے گزرانتا تھا۔ اور اس سے پہلے کہ وہ قوم کے لیے قربانی پیش کرے۔ وہ اپنے گناہوں کی قربانی پیش کرتا۔

ایک بچھیا کی قربانی اس لیے گزرانی جاتی۔ تاکہ تمام ناپاک اُسکی راکھ کے باعث پاک ٹھہریں۔ یہ تمام قربانیاں پاک جانوروں کی پیش کی جاتیں۔ ان میں بیل، بھیڑ، اور بکرہ، یہ تمام نر جانور تھے۔ سوائے ایک بچھیا جو مادہ تھی۔ یہ قربانیاں لوگوں کے کفارے کے لیے پیش کی جاتیں۔ اس کا مطلب ہے۔ کہ قربانی دینے والے شخص کی شرم اور جرم (گناہ) ڈھانپ دی جاتی۔ یہ قربانیوں کا سلسلہ حضرت آدم سے شروع ہوا۔ جس نے اللہ تعالیٰ کی رحمت کو چمڑے کے کرتوں کے وسیلے سے پایا۔ اُس کو چمڑے کے کُرتے حاصل کرنے کے لیے ایک جانور کی موت درکار تھی۔ تاکہ اُن کا ننگاپن ڈھانپ دیا جاتا۔ یہاں پر ایک بہت ہی اہم سوال پوچھا جاسکتا ہے۔ کہ آج مزید قربانیاں کیوں پیش نہیں کی جاتیں؟ ہم اس کا جواب بعد میں دیں گے۔
تورات شریف میں راستبازی کا نمونہ تورات شریف میں لفظ “راستبازی” مسلسل استعمال ہوا ہے۔ ہم اس لفظ کو سب سے پہلے حضرت آدم کی نشانی میں دیکھتے ہیں۔ جہاں اللہ تعالیٰ نے بتایا۔ کہ یہ “راستبازی کا لباس” بہتر ہے۔ ہم نے دیکھا کہ حضرت ابراہیم کو داستباز کہا گیا۔ جب انہوں نے اس وعدے پر ایمان لایا کہ اللہ تعالیٰ اُس کو ایک بیٹا دیئے گا۔ قوم بنی اسرائیل کو بتایا گیا۔ کہ وہ راستبازی حاصل کرسکتے ہیں۔ اگر وہ تمام شریعت کے احکام کی مکمل طور پر پیروی کریں گے۔

تورات شریف میں اللہ تعالیٰ کی عدالت کا نمونہ ہم نے اس نمونے کو بھی دیکھا کہ جو کوئی شریعت کی مکمل طور پر پیروی کرنے میں ناکام ہوا۔ اُس کو اللہ تعالیٰ کی عدالت کا سامنا کرنا پڑتا۔ اس کی شروعات حضرت آدم سے ہوئی۔ جن کو صرف ایک نافرمانی کی وجہ سے اللہ تعالیٰ کی عدالت کا سامنا کرنا پڑا۔ اور اس طرح اللہ تعالیٰ کی عدالت موت لاتی ہے کیونکہ اُس پاک ذات کے آگے سب ناکام اور ناپاک ہیں۔ یہ موت یا تو قربانی کی صورت میں کسی جانور پر یا پھر کسی انسان پر آتی ہے۔ جو شریعت پر مکمل طور پر عمل کرنے میں ناکام ہوگیا ہو۔ مندرجہ ذیل قربانیوں پر غور کریں۔

حضرت آدم کے لیے ایک جانور کی قربانی دی۔ تاکہ اُس کی کھال حاصل کی جاسکے۔
حضرت ہابیل نے جانور کی قربانی پیش کی۔ اس طرح ایک جانور کی موت ہوئی۔
حضرت نوح نے سیلاب کے بعد قربانی پیش کی۔ اس طرح ایک جانور کی موت ہوئی۔
حضرت لوط کے واقعہ میں نافرمانی کے باعث سدوم اور عمورہ کے لوگ مارے گئے۔ اور حضرت لوط کی بیوی نمک کا ستون (موت آئی) بن گئی۔
حضرت ابراہیم کی آزمائش میں اُس کے بیٹے کو قربان ہونا تھا۔ لیکن اُس کی جگہ ایک منڈھا ماراگیا۔ اور خدا نے یہ وعدہ کیا “خدا مہیا کرے گا”۔
فسح کے موقع پر کہا گیا تھا کہ ایک بکرہ قربان کیا جائے اور اس کا خون چوکھٹوں پر لگایا جائے۔ ورنہ نافرمانی کی صورت میں پہلوٹھا مارا جائے گا۔
اللہ تعالیٰ کی شریعت کے احکام کی پیروی مکمل طور پر نہ کرنے کے جرم میں آدمی کو یا پھر بکرے کو کفارے کے دن مرنا تھا۔

Leave a Comment