دلچسپ وعجیب قصص الانبیا ء

ایک ماں کا انتظار!دلچسپ تحریر

ماں کا انتظار

عمران کی ماں رو رو کر کہ رہی تھی ”اے اللہ! میرے بیٹے کو اپنے حفظ وایمان میں رکھنا۔ اے اللہ !اسے بُرے دوستوں کی صحبت نے برا کردیا۔ اے میرے مولا! اسے صراط ِمستقیم دکھا،اے بادشاہوں کے بادشاہ! تجھے تیری بادشاہت کا واسطہ؛ مجھے میرے بیٹے سے صرف ایک بار ملوادے ،اے میرے مولا !میرے لعل کو واپسی کا راستہ دکھا دے۔ اے خالق کائنات! اک ماں تیرے سامنے جھولی پھیلائے بیٹھی ہے اپنے بیٹے کی خیر وعافیت کی دعا مانگتی ہے۔

“ اور پھر اس کی آواز سسکیوں میں بدل گئی ،وہ رات کے اس پہر جس میں تمام لوگ محو خواب ہوتے ہیں اپنے بیٹے کی خیر وعافیت کی دعا مانگ رہی تھی۔ وہ رات کے آخری پہر اپنے بیٹے کا انتظارکررہی تھی، اس کی نگاہیں دروازے پرٹکی ہوئی تھیں۔ اس کا شوہر اورا س کے بچے اپنے اپنے کاموں میں مشغول رہتے مگر ماں کا دل تو شاید اللہ نے اولادہی کی محبت کے لیے بنایاہے، وہ آج بھی ہر روز کی طرح اپنے بیٹے عمران کا انتظار کررہی تھی جسے وہ اپنے ہاتھوں سے کھانا کھلاتی تھی جس کے لیے وہ ہر ایک سے لڑنے کو تیار ہوجاتی تھی، جس کے آنسو اسے تڑپا دیتے تھے۔وہ ہر وقت اپنے عمران کے مستقبل کے بارے میں سوچتی رہتی اس کی ساری کی ساری امیدیں اپنے بیٹے سے وابستہ تھیں۔اللہ نے اسے تین بیٹوں اور ایک بیٹی سے نوازا تھا ان میں سب سے بڑا عمران تھا،لائق اور فرماں بردار، ہر ایک کی آنکھوں کا تارا! مگر پھر قسمت نے عجیب کھیل کھیلا۔ بُرے دوستوں نے اسے نشے کا عادی بنا دیا۔ برے لوگوں کی بری صحبت نے اسے آوارہ، بے پروا،نالائق ،نافرمان اور نجانے کیاکیا بنادیا! پھر ایک دن ایک طوفانی رات میں اس نے اپنی ماں کے زیورات پکڑ ے ،گھر کا قیمتی سامان لیااور گھروالوں کو خیر باد کہتے ہوئے ہمیشہ ہمیشہ کے لیے چھوڑ گیا۔آج اسے چار سال بیت گئے مگر اس کی خیرخبر اس کے ماں باپ تک نہ پہنچی اسے ہر جگہ تلاش کیا گیامگر وہ کہیں نہ ملا۔اس کے بہن بھائیوں نے اس کو بھلادیا مگراس کی ماں ہر پل اسے یاد کرتی۔ راتوں کو اٹھ کر اپنا آنچل پھیلا کر اپنے رب سے اپنے بیٹے کی واپسی کی دعائیں مانگا کرتی تھی، اس کے آنسو اس کے آنچل کو بھگو دیتے مگر

وہ اس بات سے بے خبر اپنے بیٹے کی سلامتی کی دعائیں مانگ رہی ہوتی اسے ہر پل اپنے بیٹے کا انتظار رہتا ،وہ ہر گھڑی اپنے بیٹے کے قدموں کی آہٹ کو ترستی۔بادل کی گرج، بجلی کی چمک، موسلادھار بارش اوراندھیری رات میں دروازے پر دستک ہوتی ہے اندر سے آوازآتی ہے ”کون؟“ دستک دینے والا خاموش رہتا ہے۔دستک ایک مرتبہ پھر ہوتی ہے۔ دوسری مرتبہ آواز آتی ہے ”ارے بھئی کون ہے ؟کوئی بولے گا بھی یا نہیں؟“ باہر سے آواز آتی ہے” آپ کا بیٹا“ دروازہ فوراً کھلتا ہے اور ایک ماں اپنے برسوں کے بچھڑے بیٹے سے ملتی ہے سارے شکوے بھلا کر اسے گلے سے لگالیتی ہے اس کی پیشانی پر بوسوں کی برسات کردیتی ہے حالانکہ اس ماں کو بیٹے سے ہزاروں شکوے کرنے چاہیے تھے اس کے لیے دروازہ بھی نہیں کھولنا چاہیے مگر” ماں تو ماں ہوتی ہے۔ “یہ ایک ماں کا ردِ عمل تھا جو اپنے بچھڑے ہوئے بیٹے سے اس قدر خوشی سے ملی ذرا سوچئے ایک نہیں،دونہیں،ستر ماﺅں سے بھی زیادہ کاپیار جس ذات کے اندر موجود ہے وہ ہم سے کتنا پیار کرتا ہے۔آئیے! اپنے رب کو پکاریں؛ ہزارہا برس بھی گناہ کرکے اس کے دروازے پر جائیں تو وہ ہم سے کوئی شکوہ نہیں کرے گا بلکہ اپنی رحمت سے گناہوں پر بھی پردہ ڈال دے گا۔ اس لیے اس کا اعلان ہے کہ اے انسان تجھے کس چیز نے اپنے رب کریم سے دھوکے میں ڈالا۔آئیے !اپنے رب کومنالیں اس سے پہلے کہ بہت دیر ہوجائے اور زندگی والی مہلت بھی ختم ہوجائے !!!توبہ صرف گنہگاروں کے ساتھ خاص نہیں، بلکہ سب ایمان والوں کو توبہ کا حکم دیا گیا ہے، اللہ رب العزت کا ارشادِ گرامی ہے کہ توبہ کرو اللہ کے آگے سب مل کر اے ایمان والو!

تا کہ تم بھلائی پاؤ۔فرمان نبویﷺ ھے کہ اے لوگو!گناہوں سے باز آجاؤ اور اللہ کی طرف رجوع کرلو اور میں محمد ﷺایک دن میں سو مرتبہ اللہ کی طرف رجوع کرتا ہوں۔غور فرمائیں کہ جب اللہ تعالی کے آخری نبی صلی اللہ علیہ وسلم جو اولین و آخرین کے سردار ہیں، بخشے بخشائے ہوئے ہیں، تمام جنتیوں کے سردار ہیں، مقام محمود کے مالک ہیں، وہ ایک دن میں سو مرتبہ اللہ تعالی کی طرف توبہ و استغفار کے عمل کو اختیار کرتے ہیں تو ہم گنہگار اور خطاکار امتیوں کو کس قدر توبہ و استغفار کا اور اللہ کی طرف رجوع کا اہتمام کرنا چاہیے۔ دعا ہے اللہ پاک سب کو توبہ واستغفار کرنے والا بنائے۔اسلام علیکم ورحمۃاللہ وبرکاتہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Leave a Comment