اسلامک واقعات

اللہ کا خوف اور ڈر ایک بہت بڑا انعام ہے۔۔

بڑھاپےمیں عبادت الہی اور سجدے بہت بڑی بات ہے۔ لیکن جوانی میں سجدوں کی توفیق مل جانا ،اللہ کا خوف اور ڈر ایک بہت بڑا انعام ہے۔۔اللہ تعالی کا خوف اللہ کی عطا ہے، انسانوں کیلئے ایک بہت بڑی نعمت ہے۔ اللہ جس کی بہتری کا ارادہ کرتا ہے اسے اپنی خشیئت کا نور دے دیتا ہے،تقوئ کی دولت سے نواز دیتا ہے۔ انسانی زندگی کا مقصد کیاہے؟

اللہ کی رضا، اسی کی عبادت، اسی کا شکر، اللہ ہی کی تعریف کرنا۔ دنیاوی ضروریات اور خواہشات رنیا کا حصہ ہیں اور دنیا میں ہی رہ جاتی ہیں۔ مومن اپنی ضرورت کو مقصد پر قربان کردیتاہے، اور اور خواہشات کو مقصد پر قربانکر دیتاہے۔اور ہمارا مقصد صرف اللہ ہے۔انسانی فطرت ہے کہ انسان ہمیشہ طاقتور کے سامنے جھکتا ہے، اور سب سے طاقتور ذات اللہ کی ہے۔وہ حاکم ہے اور ہم محکوم، وہ مالک ہے اور ہم مخلوق، اسی کی حکومت ہے اور ہم رعایا ہیں، وہی جسے چاہے طاقت دیتا ہے اور بادشاہی اسی کی ہے۔لیکن ہم آج تک اس کی طاقت کو نہیں سمجھے اسی لیے ہمارے باذار سود سے بھرے ہوئےہیں،

ہماری حکومت ظلم و ستم پر چپ ہے ہماری عورتیں سرکش ہو چکی ہیں، جسے اللہ نے طاقت دی وہ متکبر اور غریب ناشکرا ہو چکا ہے۔ سب یہ بھول گئے ہیں کہ طاقت ور صرف اللہ ہے اس کی مرضی کے بغیر میرا یہ قلم تک ہل نہیں سکتا۔اس لیے ہمیں اس کے آگے جھکنا ہے۔کیوں کے حکومت اللہ کی ہے اور ہم رعایا ہیں۔جب دل سے اللہ کا خوف ختم ہوتا ہے تو حیا جاتی رہتی ہے اور پھر آہستہ آہستہ ایمان جاتا رہتا ہے۔ اس لیے دل میں اللہ کا خوف اور ڈر باقی رکھیں۔ ہر وقت اللہ کو یاد دکھیں، ہر کام کرنے سے پہلے یہ یاد رکھیں کہ اللہ دیکھ رہا ہے۔حضرت عبداللہ ابن مسعود نے مومن کی شان یہ بتائی ہے کہ

” جب مومن گناہ کر بیٹھتا ہے تو وہ یوں محسوس کرتا ہے جیسے کسی پہاڑ تلے آ گیا ہو اور پھر وہ اللہ کی طرف رجوع کرتا ہے اور توبہ کرتا ہے۔اور منافق کی مثال یہ ہے کہ گناہ کرنے کے باد اسے یوں لگتا ہے جیسے بدن پر مکھی بیٹھی تھی اور ہلکے اشارے سے اڑا دی۔تو میں اور آپ اپنے آپ کو دیکھ سکتے ہیں کہ ہم کیسا محسوس کرتے ہیں۔کہیں منافق روش ہمارے طرز زندگی میں تو نہیں؟؟جب کوئی کام کرنے کے باد وہ آپ کے دل کو کھٹکے اور آپ کو بے چین کرے اور آپ کو احساس ہو کہ غلط کام ہے اور آپ توبہ کر لیں تو سمجھ جائیں آپ کے دل میں ابھی خوف خدا باقی ہے۔اور یہ اللہ کا خوف ہی ہے جو ہمیں گناہوں سے روکتا ہے ۔۔خدایا! اللہ کی طاقت کو سمجھیں اور اور اس کے قہر سے ڑریں اور اللہ کا ڑر اپنے دل میں رکھیں کیونکہ یہ اللہ کی ایک نعمت ہے۔۔۔

Leave a Comment