اسلامک معلومات اسلامک واقعات

اللہ تعالی کے ناراض اور خوش ہونے کی تین نشانیاں

حضرت موسی علیہ السلام نے ایک دفعہ اللہ تعالی سے پوچھا کہ اللہ تعالی آپ ناراض ہوتے ہیں تو کیا نشانیاں ہیں؟ اللہ تعالی نے فرمایا: تین نشانیاں ہیں-تو حضرت موسی نے ہوچھ کیا تو اللہ تعالی نے بتایا جب اللہ ناراض ہوتے تو بیوقوف حکمران مسلط فرماتے ہیں-پیسہ بخیل کے ہاتھ میں دیتے ہیں اور بے وقت بارش کرتے ہیں-پھر حضرت موسی علیہ السلام نے پوچھا اللہ تعالی جب آپ خوش ہوتے ہیں تو اس کی کیا نشانیاں ہیں؟

تو اللہ تعالی نے فرمایا: تین نشانیاں ہیں-حضرت موسی علیہ السلام نے پوچھا کیا تو اللہ تعالی نے بتایا کہ جب اللہ خوش ہوتے تو سمجھدار حکمران مسلط فرماتے ہیں-پیسہ سخی کے ہاتھ میں دیتے ہیں اور وقت پر بارش کرتے ہیں-یہ اہم تین نشانیاں ہیں-اگر ہم اپنے آج کے حالات پر نظر ثانی کریں تو ہمارے اکثر حکمران کرپٹ ہیں-ہمارا پیسہ بخیل کے ہاتھ میں ہے-اور اب ہمارے ہاں بے وقت بارشیں بھی ہوتیں ہیں-تو اسی سے اندازہ لگا لیں کہ اللہ تعالی ہم سے کتنا ناراض ہیں-یہاں کوئی صرف ایک نشانی ہی پوری نہیں ہوئی بلکہ تینوں نشانیاں پوری ہوئی ہیں یعنی اللہ تعالی ہم سے سخت ناراض ہیں-ایک بادشاہ تھا وہ بہت زیادہ سخی تھا-اس کے پاس ایک مچھلی والا آیا بادشاہ کو اس کی مچھلی پسند آئی تو اس کو چالیس ہزار سکے دے دیے-جب بادشاہ کی بیوی کو پتا چلا تو وہ غصے میں آگئی اور بادشاہ کو مائل کیا کہ وہ مچھلی واپس کر کے پیسے واپس لے-لیکن اب مچھلی واپس کیسے کی جائے-تو بادشاہ کی بیوی نے ترکیب بتائی کہ مچھلی والے سے پوچھنا کہ مچھلی کیا تھی تو اگر اس نے کہا کہ مچھلی نر تھی تو کہنا کہ مجھے تو مادہ چاہیے تھی-اور اگر وہ کہے کہ مادہ تھی تو آپ کہنا کہ مجھے تو نر چاہیے تھی-

چناچہ مچھلی والے کو بلایا گیا- مچھلی والا شاید ملکہ کو کھسر پسر کرتے دیکھ چکا تھا-تو جب بادشاہ نے سوال کیا تو اس نے کہا مچھلی نا تو نر ہے اور نا ہی مادہ بلکہ وہ تو کھسرا ہے-بادشاہ نے خوش ہو کر اس کو چالیس ہزار سکے اور دے دیے-جب وہ جانے لگا تو ایک سکہ گر گیا-اس مچھلی والے نے وہ سکہ اٹھا لیا-ملکہ کو تو پہلے ہی غصہ تھا اس کی یہ حرکت دیکھ کر اور غصہ چڑھ گیا-اور کہا کہ اس کے پاس اتنی دولت آگئی ہے کہ اس کی پشتیں بھی کھا سکتی ہیں لیکن اس نے ایک سکہ تک نا چھوڑا یہ لالچی ہے اس سے ساری دولت واپس لی جائے-بادشاہ نے جب مچھلی والے سے پوچھا کہ اس نے ایسا کیوں کیا تو مچھلی والے نے کہا کہ اس سکے پر اپ کی مہر تھی اگر میں وہ چھوڑ دیتا تو اس پر پاوں لگتے بادشاہ خوش ہوا اور چالیس ہزار سکے اسے اور دے دیے-اپنے اپ کو سخی بنائے بخل سے کچھ حاصل نہیں ہوتا اللہ کی ناراضگی کے سوا-

Leave a Comment