اسلامک وظائف

اللہ تعالی کا نام القوی کا معنی مفہوم فوائد ووظائف

وظائف

القوی اللہ تعالیٰ کے صفاتی ناموں میں سے ایک نام ہے۔القوی کے معنی طاقتور ہےاللہ تعالیٰ نے فرمایا: بے شک (اے محمدﷺ)تیرا رب ہی طاقتور اور غالب ہے ۔(ھود 66) الْقَوِیُّ کے معنی ہیں ’’قوت والا‘‘ بڑی طاقت والا، جسے پوری کائنات مل کر بھی عاجز نہیں کرسکتی۔اللہ تعالیٰ نے فرمایا:جب ہمارا حکم آگیا تو ہم نے صالح کو اور جو لوگ ان کے ساتھ ایمان لائے تھے ان کو اپنی مہربانی سے بچالیا۔ اور اس دن کی رسوائی سے )محفوظ رکھا)۔

بےشک تمہارا پروردگار طاقتور اور زبردست ہے.القوی وہ ہوتا ہے جو ایسا طاقتور اور ایسا زور آور ہو کہ کسی لمحے میں بھی اس پر عجز غالب نہ آئے اور نہ کوئی غالب آنے والا اس پر غلبہ حاصل کر سکے اور رد کرنے والا اس کا فیصلہ رد نہ کر سکیں۔سوالاکھ نبیوں ،رسولوں اور پیغمبروں نے آکر انسانوں کو بتلایا کہ اے انسانوں اللہ کی طاقت ،عظمت ،قدر ت اور علم کو پہچانو ، کہ رب کون ہے ؟ہم اپنے چھوٹے سے دماغ سے رب العالمین کی طاقت کا تصور بھی نہیں کر سکتے ۔ جس اللہ کے سامنے بڑے بڑے نبی، رسول ،پیغمبر ، ولی ،بزرگ ہر وقت کانپتے ہوں ، سجدے اور رکوع میں جا کر روتے ہوں اور کائنات کی سب سے بڑی اور بزرگ شخصیت ،سارے انسانوں، جناتوں، نبیوں، رسولوںاور تمام مخلوقات کے ساتھ سارے معصوموں کے سردار جناب محمد رسول اللہ ﷺ ہر وقت رو رو کر امت کیلئے دعائیں مانگ رہے ہیں،اس رب کی طاقت کا ہم اندازہ بھی لگانے کے لائق نہیں۔انسان بہت ہی کمزور مخلوق ہے ، اپنی پیدائش سے لیکر موت تک ہرپل اورہرلمحہ اپنے خالق کی مہربانی کا محتاج ہے ۔ہاتھ وپیر میں چلنےپھرنے ،اٹھنے بیٹھنے اور کام کاج کرنے کی طاقت۔ ناک ، کان اور آنکھ میں سونگھنے ، سننے اور دیکھنے کی طاقت –دل ودماغ میں سوچ وفکر کی طاقت –اور جسم میں جان کی طاقت سب ان اعضا کے بنانے والے اللہ کی جانب سے ہے ۔ ایک آدمی اسی وقت زندہ رہ سکتا ہے جب تک اللہ کی مہربانی ہے ، اس کی مہربانی سے محروم ہوتے ہی وہ دنیا سے فنا ہوجائے گا۔ اس بات کو مثال سے اس طرح سمجھیں کہ اللہ ایک آدمی پر تئیس گھنٹے مہربان رہا اور چوبیسویں گھنٹے اپنی مہربانی ہٹالیتا ہے، اس کے بعد آدمی چوبیس سکنڈبھی سانس نہیں لے سکتا ۔ اس قدر مجبور وکمزور انسان بھلا طاقتور کیسے ہوسکتا ہے ؟اللہ نے انسانوں کی کمزوری کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا:اللہ چاہتا ہے کہ تم پر آسانی کر دے کیونکہ انسان کمزور پیدا کیا گیا ہے ۔دوسری جگہ ارشاد فرمایا:

: اب اللہ تمہارا بوجھ ہلکا کرتا ہے ، وہ خوب جانتا ہے کہ تم میں کمزوری ہے ۔سورہ روم میں انسان کی مرحلہ وار کمزوری بتاتے ہوئے اللہ فرماتا ہے :اللہ تعالٰی وہ ہے جس نے تمہیں کمزوری کی حالت میں پیدا کیا پھر اس کمزوری کے بعد توانائی دی ، پھر اس توانائی کے بعد کمزوری اور بڑھاپا دیا جو چاہتا ہے پیدا کرتا ہے وہ سب سے پورا واقف اور سب پر پورا قادر ہے۔بہرکیف! قوت وطاقت والے اقوام وافراد کے عروج وزوال اور ان کی تباہیوں کی طویل داستانیں ہیں ، یہاں بتانا یہ مقصود ہے کہ انسان کو بدن یا زمین کی قوت ملتی ہے وہ بھی اللہ کی طرف سے ہے اور اس وقت تک رہتی ہے جب تک اللہ چاہتا ہے ۔ اللہ ہی قوت وطاقت والا ہے ، وہ ہمیشہ سے ہے اور ہمیشہ رہے گا، اسے تھکان لاحق نہیں ہوتی، اسے اونگھ نہیں آتی ، اسے کھانے پینے کی حاجت نہیں ،اس میں کوئی نقص وعیب نہیں ، وہ سب سے بلند اور سب سے زیادہ قوت وطاقت والا ہے ۔ اللہ کا فرمان ہے : :تمام طاقت اللہ ہی کو ہے اور اللہ تعالیٰ سخت عذاب دینے والا ہے۔دوسری جگہ ارشاد ہے۔ یقینا تیرا رب ہی طاقتور اور غالب ہے۔ایک جگہ یوں ارشاد ہے : اللہ تعالی تو خود ہی سب کا روزی رساں ، طاقت والا اور زبردست زورآور ہے۔اللہ تعالی کے اس اسم القوی سے بندہ کا نصیب یہ ہے کہ وہ خواہشات نفسانی پر غالب اور قوی ہو دین کے معاملہ میں سخت و چست رہے اور شرعی احکام کو نفاذ کرنے اور پھیلانے میں کسی سستی اور کمزوری کو راہ نہ دے۔ اللہ تعالی کے اس اسم القوی کے فوائد و برکات میں سےہے کہ اگر کسی کا دشمن قوی ہو اور وہ اس کے دفاع میں عاجز اور لاچار ہو تو وہ تھوڑا سا آٹا گوندھے اور اس کی ایک ہزار ایک سو گولیاں بنا لے۔

پھر ایک ایک گولی اٹھاتا جائے اور یا قوی پڑھتا جائے اور اس گولی کو بہ نیت دفاع دشمن مرغ کے آگے ڈالتا رہے حق تعالیٰ اس کے دشمن کو مغلوب و مقہور کر دے گا اور اگر اس اسم پاک کو جمعہ کی شب میں بہت زیادہ پڑھا جائے تو نسیان کا مرض جاتا رہے گا اگر کسی بچہ کا دودھ چھٹایا گیا ہو اور وہ بچہ اس کی وجہ سے صبر و قرار نہ پاتا ہو تو اس اسم پاک کو لکھ کر اس بچہ کو پلا دے اسے صبر و قرار آ جائے گا، اسی طرح اگر کسی دودھ والی کے دودھ میں کمی ہو تو اس اسم پاک کو لکھ کر اس کو پلا دیا جائے اس کے دودھ میں فراوانی آ جائے گی اور اگر کوئی شخص ملک و حکومت کے کسی منصب یا کام پانے کی خواہش رکھتا ہو تو وہ اس کو اتوار کے روز اول ساعت میں اپنے مقصد کی نیت سے اس اسم المتین کو تین سو ساٹھ بار پڑھے۔ انشاء اللہ اس کو وہ منصب حاصل ہو گا۔جوشخص واقعی مظلوم ،کمزور اور مغلوب ہووہ اس ظالم اور طاقتور دشمن کو دفع کرنے کی نیت سے بکثرت اس اسم مبارک کو پڑھے توانشاء اللہ اس سے محفوظ رہے گا۔* فرض نماز کے بعد ماتھے پر ہاتھ رکھ کر گیارہ بار یاقَوِیُّ پڑھنے سے حافظہ قوی ہوتا ہے۔* اگر اسے کم ہمت پڑھے باہمت ہوجائے اگر کمزور پڑھے زور آور ہو۔* اگر مظلوم ظالم کو مغلوب کرنے کیلئے پڑھے توانشاء اللہ ظالم مغلوب ہوجائے۔ *جس کا رزق تنگ ہو وہ ایک ہزار بار یہ اسم مبارک پڑھے اور اس کے ساتھ اس آیت کا ورد کرے ۔ ( اَللّٰہُ لَطِیْفٌم بِعِبَادِہٖ یَرْزُقُ مَنْ یَّشَآءُ وَھُوَ الْقَوِ یُّ الْعَزِیْزُ ) انشاء اللہ اس کے ساتھ لطف وکرم کا معاملہ ہوگا اور خیر کا دروازہ اس کیلئے کھول دیا جائے گا ۔ *جواس اسم کوبکثرت پڑھے گا انشاء اللہ صاحب قوت ہوگا اور جلد بڑے منصب تک پہنچے گا۔ *جس کا دشمن طاقت ور ہواور یہ اس کودفع کرنے سے عاجز ہوتو تھوڑا ساخمیرہ آٹا لے کر اس کی ایک ہزار ایک سو گولیاں بنالے پھر ہرایک گولی پر (یاقویُّ )پڑھ کردشمن کے دفع کی نیت سے مرغ کے آگے ڈالے یہاں تک کہ سب اسی طرح ختم کر دے اللہ تعالی اس کے دشمن کو انشاء اللہ مغلوب ومقہور کردے گا بے محل اور ناحق یہ عمل نہ کرے ورنہ اپنا نقصان ہوگا۔ *ہرفرض نماز کے بعد سینے پر دل کے اوپر ہاتھ پھیرتے ہوئے سات با ر یَاقَوِیُّ الْقَادِرُ الْمُقْتَدِرُ قَوِّنِیْ وَقَلْبِیْ کا ورد کرنے والا ہارٹ اٹیک سے محفوظ رہے گا ۔ *اگر جمعہ کی دوسری ساعت میں یہ اسم پڑھے گا تو نسیان جاتارہے گا ۔ *جو بچہ چلنے کی طاقت سے محروم ہو ،زیتون کے تیل پر ایک ہزار بار یاقوی پڑھ کر اس تیل سے اس کی ٹانگوں کی مالش کریں بچہ بہت جلد چلنے لگے گا۔دعا ہے کہ اللہ تعالی ہمیں اپنی کمزوری کا اقرار کرنے اور ذات باری تعالی کی طاقت کے سامنے جھکنے والابنائے۔ آمین السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

Leave a Comment