اسلامک وظائف

اللہ تعالی کا صفاتی نام ذوالجلال والاکرام کا معنی مفہوم اور فوائد وظائف

ذوالجلال والاکرام

ذوالجلال والاکرام عظمت اور بزرگی والا۔ اسماء الحسنیٰ میں سے ایک نام ہے۔ یہ اللہ تعالیٰ کی مخصوص صفت ہے چنانچہ یہ ذوالجلال والاکرام صرف اسی کو کہا جاتا ہے دوسروں کے لیے استعمال نہیں کیا جاسکتا۔اللہ تعالیٰ غلبہ و بزرگی والا ہے اور اپنے غیر سے مستغنی ہے (بے پروا ہے) یا تو یہ صفت الٰہی ہے۔ یا یہ اسماء صفات ہیں۔ واضح مفہوم یہ ہے کہ اللہ تعالی مخلوق کو فنا کے بعد زندہ کرے گا اور ہمیشہ کی زندگی دے گا اور اپنے مومن بندوں پر خوب نوازش فرمائے گا۔

ذوالجلال والاکرام اسم اعظم ہے جیسا کہ ترمذی کی روایت میں وارد ہے اور حضور علیہ الصلوٰہ والسلام نے اسے دعاؤں میں ہمیشہ التزام کے ساتھ ورد کی تلقین فرمائی ہے کیونکہ اسم اعظم کے توسل سے مانگی ہوئی دعا رد نہیں ہوتی اور مستجاب ہےبزرگی اور بخشش کا مالک۔ جس نے خدا کا جلال جانا تو اس کی بارگاہ میں تذلل اختیار کرے اور جس نے اس کا اکرام دیکھا تو اس کا شکر گزر ہو پس نہ تو غیر اللہ کی اطاعت فرمانبردار کی جائے نہ خدا کے علاوہ کسی اور سے اپنی حاجت بیان کی جائے۔جو ہر بھلائی اور شرف کمال کا مستحق ہے۔ ہر عزت اور سخاوت بھی اس سے ملنے والی ہے۔ اگر کوئی مخلوق کسی کو عزت دے یا اس کے ساتھ سخاوت کرے تو وہ بھی اس کے حکم سے ہے۔ اس کی سخاوت اپنی مخلوق پر بے انتہا ہے۔ (الغزالی) یہ اس کی شان ہے کہ اس کی بڑائی اور بادشاہی کے سامنے اس کی ہیبت سے (خوفزدہ ہوکر) رہا جائے اور اس کی شان کے مطابق اس کی تعظیم کی جائے۔ وہ اپنی مخلوق کے لیے ایسا رب ہے جس کی تعظیم و تکریم کرنا مخلوق پر واجب ہے اور یہ حق کسی اور کا نہیں ہے کیونکہ وہ وحدہ لاشریک لہ ہے۔وہ مالک حقیقی ھے جو اپنی مخلوق میں جو چاھے تصرف کرے جسے چاھے موجود کرے یامعدوم کرے وھی سب کا مالک مختار ھے اور قادر مطلق ھے اللہ تعالیٰ فرماتا ھے (لوگوں اپنے تمام کام اللہ کے حوالے کردو اگر اپنے باطن کو اس سے خوفزادہ کرو گے تو تمھاری ظاھری حرکات کو محفوظ رکھے گا اور جب دوسرے لوگ ڈریں تو، تم کو امن دے گا)

یہ اسم اعظم ہے جس کا ثبوت ہے کہ ایک مرتبہ حضور کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے جاتے جاتے سنا ایک اعرابی یہ دعا کر رھا ھے (اللھم انی اسئلک باسمک العظیم العظم الحنان مالک الملک ذوالجلال والاکرام) تو فرمایا اس شخص نے اسم اعظم کے ساتھ دعا کی ہے جو شخص اس اسم کے ساتھ دعا کرتا ھے قبول ھوتی ھے اور جو مانگتا ھے دیا جاتا ھے اس اسم کے ذاکر کو مراقبہ کرنا اور اس اسم کے عداد کے موافق پڑھنا لازمی ھے تاکہ موکل ھائیل اور طفیائل اور مرجائیل موکل اس کی مدد کریں لیکن موکل کو تابع کرنے اور حاضر کرنے کی نیت ھرگز نھی کرنی ھے،،اس کے عدد ھیں ،(1312)مرتبہ روزانہ ورد کرنا چاھیے اول آخر درود شریف اور جب یےتعداد پوری کر لے تو مراقبہ کرے یعنی زبان تالو سے لگا کر موں بند انکھیں بند سارے خیالات کو ھٹا کر اعوذ باللہ مکمل پھر بسم اللہ مکمل پڑھ کر دل کی زبان سے کم سے کم پندرا منٹ زیادا 45منٹ تک ورد کرے چاھے تو صبح کو زبان سے 1312مرتبہ ورد کرے اور رات کو مراقبہ کرے دو ٹائم میں تقسیم کر لے اس سے مشکلیں آسان ھوں مکان میں برکت ھو حمل کی حفاظت ھو ذاکر کی بخشش ھو ذاکر کو اسرار مخلوقات کا کشف ھو اس اسم کا نقش 25ضرب 25ھے جو بہت عظیم نقش ھے یہ نقش شرف شمس میں لکھ کر اس کے اطراف سورہ حدید لکھیں پھر اسم کا ورد کرکے اور سورہ ملک اس پر دم کرے پھر اس کو اپنے پاس رکھے۔

اللہ تعالی کے اس اسم ذوالجلال والاکرام سے بندہ کا نصیب یہ ہے کہ وہ اپنی ذات اور اپنے نفس کے لئے بزرگی کے حصول کی کوشش کرے اور بندگان خدا سے اچھا سلوک کرے۔ اللہ تعالی کے اس اسم ذوالجلال والاکرام کے فوائد و برکات میں سے ہے کہ * جوشخص کثرت سے یَا ذَاالْجَلَالِ وَالْاِکْرَامِپڑھے گا اللہ تعالی اس کو عز ت وعظمت اور مخلوق سے استغناء عطا فرمادیں گے۔* بعض علماء اس کو اسم اعظم کہتے ہیں ۔جوشخص ( یَاذَاالْجَلَالِ وَالْاِکْرَامِ بِیَدِکَ الْخَیْرُ وَاَنْتَ عَلٰی کُلِّ شَیْءٍ قَدِیْرٌ ) یا( یَاذَاالجَلَالِ وَالْاِکْرَامِ بِیَدِکَ الْخَیْرُ) سو بار پڑھ کر پانی پردم کرکے بیمار کو پلائے تو انشاء اللہ بیمار شفاپائے گا اور اگر دل غمگین ہوگا تواس عمل سے انشاء اللہ مسرور ہوگا۔* جوکوئی روزانہ پابندی سے تین سوتینتیس (۳۳۳)بار یَا مَالِکَ الْمُلْکِ یَاذَاالْجَلَا لِ وَالْاِ کْرَامِ پڑھے گا دنیا اس کی فرمانبر دار رہے گی ۔* بعض مشائخ فرماتے ہیں کہ یاحَیُّ یاقَیُّومُ بِرَحْمَتِکَ اَسْتَغْیثُ یَا ذَاالْجَلَالِ وَالْاِکْرَامِ میں اسم اعظم ہے ۔زبان کے لئے مطلوب کے نام کے ساتھ یہ نقش لکھ کر سورہ یاسین اس پر دم کریں یہ نقش تین کاموں کے لئے لکھا جاتا ھے حکام کو مھربان کرنے حکم جارے کرنے کے لئے مشکلوں کی اسانی کے لئے چاندی کی انگوٹھی میں لکھ کر پہننے سے رعب ودبدبا قبولیت عامہ ہوتی ھے مکان میں رکھنے سے مکان میں برکت ھوتی ھے جس کا حمل ساقط یوجاتا ھے وہ اپنے پاس رکھے تو حمل قائم رہے گا یے نقش اپنے پاس رکھنے والا سلامت رہتا ھے دو ادمیوں میں صلح کرانے کے لئے گھول کر پلائیں دنوں میں صلح ھوگی بعض علمائے اس کو سیسہ کی تختی پرلکھااگر لکھ کر دلہن اپنے پاس رکھے تو اس کی زیبائش بہت اچھی معلوم ھو ۔

دیگر ضروریات کی تکمیل کے بھی اس میں اثرات ھیں امام محمد بن ادریس رازی رحمتہ اللہ نے کتاب اکبیر میں لکھا ہے جو عباسی خلیفہ ہارون الرشید کے خزانے سے حاصل کی گئی تھی کہ ذالجلال والاکرام کہ اسم اعظم ھے اور یہی وہ اسم ھے جس سے آصف بن برخیا رحمتہ اللہ علیہ نے دعا کر کے حضرت سلیمان علیہ سلام کی خدمت میں بلقیس کا تخت حاضر کیا تھا۔کثرت سے یہ پڑھنا چاہیئے یہ ذکر بولی بسری سنت بنتا جا رہا ہےحالانکہ آپ ﷺ نے اس کی وصیت اور اس کے متعلق نصیحت فرمائی ہے .رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمایا : سیدنا انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی اکرم ﷺ نے فرمایا: ” يَا ذَا الْجَلاَلِ وَالإِكْرَامِ” کولازم پکڑو(یعنی :اپنی دعاؤں میں برابر پڑھتے رہاکرو”۔)..کثرت سے پڑھو .. اسے لازم پکڑو ..رسول الله صلى الله عليہ وسلم نے جو اس ذکر کے پڑھنے کا کہا ہے اس میں ایک عظیم راز پوشیدہ ہے .ياذا الجلال کے معنی ہیں : بہت زیادہ بڑے جلال، کامل بزرگی والی ہستی .والإكرام کے معنی ہیں : اور اپنے اولیا کے لیے اکرام وتکریم کی مالک ہستی ..اور اگر آپ غور و فکر فرمائیں تو معلوم ہوگا کہ آپ نے اس بلند و برتر ہستی کی تعریف بھی کی ہے اور اس سے مانگ بھی رہے ہیں !!سوچیئے اگر دن میں آپ یہ سینکڑوں دفعہ پڑھتے ہیں ..ياذا الجلال .. ضرور اللہ تعالٰی اس سے راضی ہو گااور سینکڑوں دفعہ پڑھیں : والإكرام وہ آپ کی حاجات جانتا ہے وہ ضرور عطا فرمائے گا !دعا ہے کہ اللہ تعالی ہمیں اپنے غیب کے خزانوں سے نعمتیں اور فضل عطا فرمائے۔آمین السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

Leave a Comment