اسلامک معلومات اسلامک واقعات

الحفیظ” اور “الحسیب”کا تفصیلی مطلب

الحفیظ کا مطلب ہوتا ہے ” سب کا نگہبان”- نگہبان یعنی حفاظت کرنا یا دیکھ بھال کرنا-ہم اس سے زیادہ خوش قسمت ہو سکتے ہیں بھلاں کے اللہ تعالی ہمارے نگہبان ہیں-چند گھنٹوں یا چند دنوں کے لیے نہیں بلکہ ہمیشہ کیے لیے چوبیس گھنٹوں کے لیے-وہ ہمیشہ ہم پر نظر رکھے ہوئے ہیں-

جہاں ہمارے ماں باپ ہماری حفاظت نہیں کر سکتے وہاں اللہ کرتا ہے-یا اللہ تعالی نے ہمارے اردگرد ایسے لوگ رکھے ہوتے ہیں جو ہر حال میں ہماری حفاظت کرتے ہیں-گھر سے نکلنے کی کتنی ہی دعائیں ہیں بڑے بزرگ اماں ابا ہمیں کہتے رہتے ہیں کہ دعا پڑھ کر جانا-ایسا اسی لیے ہی ہے ایک تو ہم اللہ سے دعا کر کے اپنا آپ اللہ تعالی کو سونپتے ہیں اور دوسرا ہم اپنے آپ کو یہ باور کرواتے ہیں کہ اللہ ہے جو ہمیشہ میرے ساتھ رہے گا-

الحسیب سے مراد “سب کے لیے کفایت کرنے والا” ہے-اللہ تعالی کے فیصلے وہی بہتر جانتا ہے-بے شک اللہ تعالی کفالت کرنے والا ہے وہ وہاں سے ہمارے لیے مدد کا انتظام کرتا ہے جہاں سے ہم نے سوچا بھی نہیں ہوتا-کبھی کبھی ہمیں ایک چیز کا بہت دل چاہ رہا ہوتا ہے وہ چیز کھانے پینے والی بھی ہو سکتی ہے کوئی کتاب بھی ہو سکتی یا کوئی سوٹ بھی ہوسکتا ہے-پھر ہم دیکھتے ہیں کہ کچھ دنوں بعد ہماری وہ خواہش پوری بھی ہوجاتی ہے-

وہ کہیں نا کہیں سے راستے نکال ہی دیتا ہے-لیکن پھر ہم کیا کرتے ہیں؟ہم اس کا شکر کرنا بھول جاتے ہیں-اللہ تعالی نے ایسے ہی بندوں کو ناشکرا نہیں کہا-وہ ہمیں اتنا کچھ عطا کرتا ہے لیکن جب کسی ایک چیز میں آزماتا ہے تو ہم شکوہ کرنے لگتے

Leave a Comment